آئی ٹی کی ماہر ایک سعودی خاتون نے بولنے کی صلاحیت سے محروم لوگوں کے لیے انتہائی حیران کن ڈیوائس ایجاد کر ڈالی ہے۔

یہ ڈیوائس دستانوں کی شکل میں ہے جسے بولنے کی صلاحیت سے محروم افراد پہن کر ہاتھوں کے اشاروں سے بات کریں گے اور یہ ’سمارٹ گلوز‘ (Smart Gloves)ان کے اشاروں کو الفاظ میں بیان کریں گے۔ اس طرح وہ ان لوگوں کے ساتھ بھی بات کر سکیں گے جو اشاروں کی زبان نہیں سمجھ سکتے۔اس کا کہنا تھا کہ ان داستانوں کو بنانے کا مقصد بولنے کی صلاحیت سے محروم افراد کی مشکلات میں کمی کرنا تھا جس میں وہ لھگ بھگ کامیباب ہوگے۔

یہ ایجاد کرنے والی موجد کا نام حدیل ایوب ہے جو لندن میں مقیم ہے۔ وہ ’برائٹ سائن‘ نامی آئی ٹی کمپنی کی بانی ہے۔ اس کا کہنا تھا کہ ”میں نے آئی بی ایم گلوبل ہیکاتھن میں اپنی یہ ایجاد پیش کی اور مقابلہ جیتا تھا۔ جب میرے بنائے گئے ان دستانوں کی خبر میڈیا پر پھیلی تو مجھے ہزاروں کی تعداد میں ای میلز موصول ہونی شروع ہو گئیں جو والدین کی طرف سے تھیں۔ وہ مجھ سے اپنے بچوں کے لیے دستانے بنا کر دینے کا تقاضا کر رہے تھے جو بول نہیں سکتے تھے۔ وہیں سے میں نے اس پراڈکٹ کو بڑے پیمانے پر بنانے کا سوچا۔ یہ دستانے رواں سال کے آخر تک مارکیٹ میں متعارف کروا دیئے جائیں گے۔“

یاد رے کہ دنیا میں تقریبا 9 بلین لوگ بہرے اور گونگے ہیں۔

 

0 replies

Leave a Reply

Want to join the discussion?
Feel free to contribute!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے