غیرملکی خبررساں ایجنسی کے مطابق طالبان نے افغانستان کے شمالی صوبے بغلان کے صدر مقام پل خمری پر حملہ کیا ہےجس کے بعد سے افغان سیکیورٹی فورسز اور جنگجوؤں میں جھڑپیں جاری ہیں۔

پل خمری میں حملوں کے نتیجے میں درجنوں افراد کی ہلاکت اور 100 کے قریب زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں جبکہ افغان حکام نے طالبان کا حملہ ناکام بنانے کا دعویٰ کیا ہے۔

صوبائی کونسل کےچیف صفدر محسنی نے پل خمری کےمضافات میں طالبان سے جھڑپوں کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ شہر میں دھماکوں کی آوازیں سنائی دے رہی ہیں جس کے باعث شہری پریشان اور خوفزدہ ہیں، پل خمری شہر مکمل طور پر بند ہے،پل خمری شہر کی آبادی 2 لاکھ 21 ہزار سے زائد آبادی پرمشتمل ہے جو کہ افغان دارالحکومت کابل سے 230 کلومیٹردورہے۔

دوسری جانب قندوز پر طالبان حملے میں 25  سے زائد افراد ہلاک اور 85 زخمی ہوئے ہیں جبکہ ہلاک افراد میں 20 افغان سیکیورٹی اہلکار اور 5 شہری شامل ہیں۔ افغان حکام نے قندوز حملے میں 56 طالبان بھی مارنے کا دعویٰ کیا ہے،یاد رہے کہ افغان طالبان کی جانب سے افغانستان کے شہروں پر حملے ایسے وقت میں ہورہے ہیں جب امریکا اور طالبان کے درمیان مذاکرات کامیاب ہونے والے ہیں او حتمی معاہدے کے قریب پہنچ چکے ہیں۔ 

0 replies

Leave a Reply

Want to join the discussion?
Feel free to contribute!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے