ترجمان دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ بھارتی وزیردفاع کاایف اے ٹی ایف سے متعلق بیان حقائق کے منافی ہے۔ جس کا عالمی تنظیم کے ارکان کو نوٹس لینا چاہیے ۔

بھارتی ذرائع ابلاغ  کے مطابق عالمی تنظیم فنانشنل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) کے ایشیا پیسفک گروپ کے جائزہ اجلاس میں پاکستان کی کارکردگی اچھی نہیں تھی ، اور پاکستان کو بلیک لسٹ کیے جانے کا امکان موجود ہے ۔

تاہم پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے ان دعوؤں کو مسترد کرتے ہوئے انہیں ’’بھارتی پروپیگنڈا‘‘ قرار دیا ہے۔

میڈیا رپورٹس کا جواب دیتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ’’ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو بلیک لسٹ نہیں کیا،دنیا کو بھارتی پروپیگنڈا اور جھوٹی خبروں کا نوٹس لینا چاہیے‘‘۔

ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ بھارت ایف اے ٹی ایف کوسیاسی مقاصد کیلیے استعمال کررہاہے، بھارت ایف اے ٹی ایف کی کارروائی پراثراندازہورہاہے۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ بھارت ایشیا پیسفک گروپ میں معاون چیئرمین شپ کا غلط استعمال کررہا ہے ، پاکستان اس سلسلے میں تحفظات رکن ممالک کے سامنے رکھ چکا ہے۔

ترجمان نے کہا کہ توقع ہے ارکان بھارت کی ان گمراہ کن سازشوں میں نہیں آئیں گے ۔

واضح رہے کہ بینکاک میں اے پی جی کے اجلاس میں شرکت کے بعداکنامک افیئرز ڈویژن کے پاکستانی وزیرحماد اظہر نے بتایا کہ ’’پاکستانی وفد نے ایف اے ٹی ایف ایکشن بلان سے متعلق کی گئی پیش رفت کے بارے میں مؤثر طور پر آگاہ کیا، اور اے پی جی جوائنٹ گروپ کو اضافی اطلاعات اور وضاحتیں پیش کی گئیں‘‘۔

اس حوالے سے ایف اے ٹی ایف منی لانڈرنگ اور دہشت گردی فنانسنگ کے خلاف دس پوائنٹس پر پاکستان کی کارکردگی کی جانچ پڑتال کرے گا، جس کے بعد فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کی گرے لسٹ کے معاملے پر پاکستان کی قسمت کا فیصلہ ہوگا۔

عالمی تنظیم فنانشنل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف)  کا اجلاس 13 سے 18 اکتوبرتک پیرس میں ہورہا ہے۔ نگرانی کا یہ ادارہ عالمی سطح پر دہشت گردی کی مالی اعانت اور منی لانڈرنگ کے معاملات پر نظر رکھتا ہے۔

 

0 replies

Leave a Reply

Want to join the discussion?
Feel free to contribute!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے