ریبیز ملک گیر مسئلہ بنتا جا رہا ہے ۔ سندھ میں ریبیز کی ویکسین بروقت میسر نہیں ہوتی  جس کی وجہ سے مریض اپنی جان کی بازی ہار جاتا ہے ۔

تھر کی تحصیل چھاچھرو کا رہائشی 11سالہ امتیازسمیجو بھی قومی ادارہ صحت برائے اطفال میں دم توڑگیا۔ رواں ہفتے میں آوارہ کتے کے کاٹے سے ہلاکت کا یہ دوسرا مریض ہے ، اس سے قبل کراچی کا رہائشی سلیم ویکیسن نہ ملنے کے باعث جان سے ہاتھ دھو بیٹھا تھا ۔

ذرائع کے مطابق بچے کو ڈیڑھ ماہ قبل کتے نے کاٹا تھا۔ لیکن  دیہی ہیلتھ سینٹر چھاچھرو میں بچے کو ایکسپائر ویکسین لگائی گئی والدین نے اسپتال انتظامیہ پر الزام لگا دیا

این آئی سی ایچ نے ریبیز سے متاثرہ بچے کے انتقال کی تصدیق کردی

واضح رہے سندھ میں رواں برس ریبیز سے ہونے والی اموات کی تعداد  21 ہوگئی۔

واضح رہے کہ دو روز قبل کراچی میں اینٹی ریبیز نہ ملنے کے باعث ہونے والی  ہلاکت پروزیر صحت نے انکوائری کرنے کا اعلان کردیا، ان کا کہنا تھا کہ ریبیز کی ویکیسن کہاں چلی جاتی ہے ، محمد سلیم کو ویکیسن کیوں نہیں ملی جس کی مکمل چھان بین  کی جائے ۔

0 replies

Leave a Reply

Want to join the discussion?
Feel free to contribute!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے