ضلع گوادر میں  سینڈ آرٹ مقابلے کا انعقاد کیا گیا ،  جس میں 19 ٹیموں نے شرکت کی ۔ مقابلے میں شریک بیشتر فنکاروں کا تعلق  پسنی سے ہے ، اپنی نوعیت کا یہ منفرد مقابلہ دوسری بار منعقد کیا جا رہا ہے جس میں آبی حیات کو لاحق خطرات اور تحفظ کو موضوع بنایا گیا ہے ۔

ریت کے ذرات سے فن پارے تخلیق کرنے والے فنکاروں کا کہنا ہے موسمی تبدیلیاں اور ماحولیاتی آلودگی نہ صرف ساحلوں کی خوبصورتی کو متاثر کررہی ہے بلکہ سمندری حیات کو بھی نقصان پہنچ رہا ہے۔ 

واضح رہے کہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار گوادر میں سینڈ آرٹ کا مقابلہ کرانے کا سہرا ڈپٹی کمشنر گوادر کیپٹن محمد وسیم ،  ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر گوادر انیس طارق گورگیج اور بامسار کے نصیر محمد کے سر جاتا ہے جنہوں نے پہلی بار سینڈ آرٹ کے مصوروں کے درمیان مقابلے کا انعقاد کرکے پلیٹ فارم فراہم کیا ۔

مقابلے کے شرکا کا کہنا ہے کہ سینڈ آرٹ مقابلہ کے انعقاد سے فنکاروں کی بہترین حوصلہ افزائی ہوئی ہے  ہم گوادر کی  ضلعی انتظامیہ اور بامسار کی کاوشوں کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہوئے انھیں سلام پیش کرتے ہیں  اور امید کرتے ہیں کہ گوادر میں تعنیات نوجوان افسران ضلع بھر کے نوجوانوں کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے ہر میدان میں گوادر کے نوجوانوں کا ساتھ دیں گے ۔۔

0 replies

Leave a Reply

Want to join the discussion?
Feel free to contribute!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے