آسٹریلیا کے جنگلوں میں لگی آگ پوری دنیا کے  ماحول کے لئے ایک خطرہ بنی ہوئی ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق اس آگ سے نکلنے والا دھواں گیارہ ہزار کلومیٹر دور، سمندروں کی دوسری جانب لاطینی امریکہ تک پہنچ گیا ہے۔

عالمی محکمہ موسمیات (ڈبلیو ایم او) کے مطابق چلی کا آسمان اس دھوئیں میں چھپ گیا اور ارجنٹینا کے دارلحکومت بیونس آئرس میں دو دن قبل شام کا سورج اس دھوئیں سے دھندلا گیا۔

اس آگ سے اب تک 400 میگاٹن کاربن ڈائی آکسائڈ ہوا میں خارج ہو چکی ہے۔ یہ پورے کرۂ ارض کے لئے ایک خطرہ ہے۔ اس آگ سے فضا میں جو راکھ خارج ہوئی ہے، وہ نیوزی لینڈ کے گلیشیرز پر جا کر بیٹھ گئی ہے جس کے نتیجے میں ان گلیشیرز کے پگھلنے کا عمل تیز ہونے کا شدید خدشہ لاحق ہو گیا ہے۔

ادھر یہ خبریں بھی آئی ہیں کہ آسٹریلیا کی حکومت نے دس ہزار اونٹ ہلاک کرنے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ خشک سالی کی وجہ سے، حکومت کے مطابق، پانی کی کمی ہے اور اونٹ نہ صرف پانی کے وسائل پر بوجھ ہیں بلکہ وہ پانی کی تلاش میں آبادیوں کا رخ کرتے ہیں اور پانی کی ٹنکیوں کو بھی توڑ دیتے ہیں۔

0 replies

Leave a Reply

Want to join the discussion?
Feel free to contribute!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے