امریکی خبر رساں ادارے کی حالیہ رپورٹ  کے مطابق  جنرل قاسم سلیمانی کے بزدلانہ اور بہیمانہ قتل کے لیے اسرائیلی انٹیلی جنس نے  امریکہ کو خفیہ معلومات فراہم کی تھیں۔

امریکی ذرائع کے مطابق  شہید میجرجنرل قاسم سلیمانی کے قتل کے لیے اسرائیلی انٹیلی جنس  نے امریکہ کی معاونت کی تھی اور اسرائیلی خفیہ ایجنسی  سے ہی امریکہ کو تصدیق ہوئی کہ جنرل قاسم سلیمانی دمشق سے بغداد کس طیارے میں آرہے ہیں۔

امریکی میڈیا کا کہنا ہے کہ امریکی خفیہ ایجنسی سی آئی اے کو ایک مخبر نے شام سے اطلاع دی تھی کہ قاسم سلیمانی کس طیارے میں سوار ہوں گے جس کے بعد اسرائیلی انٹیلی جنس نے مخبر کی اطلاع کی تصدیق کرتے ہوئے اس اطلاع کی توثیق کی تھی۔نجی شامی ائیر لائن شام ونگز کے ائیربس اے 320  کے بغداد ائیر پورٹ پر پہنچنے کے بعد وہاں موجود امریکی جاسوسوں نے قاسم سلیمانی کی آمد کی اطلاع امریکی فوج کو دی جس کے بعد ہیلی فائر میزائلوں سے لیس 3 امریکی ڈرون نے ہدف کو نشانہ بنایا۔

اس دوران انہیں کسی قسم کی دقت کا سامنا نہیں کرنا پڑا کیو نکہ عراق کی فضائی حدود مکمل طور پر امریکہ کے زیراثر ہے۔ اسرائیلی وزیراعظم امریکی کارروائی سے پیشگی آگاہ تھے۔ ادھرامریکی اخبار نیویارک ٹائمز کے مطابق اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو کی قاسم سلیمانی پر حملے سے قبل امریکی وزیر خارجہ مائیک پمپئو سے ٹیلی فونک گفتگو ہوئی تھی اور وہ خطے میں واحد رہنما تھے جو امریکہ کی اس کارروائی سے آگاہ تھے۔ واضح رہے کہ 3 جنوری کو امریکہ نے بغداد میں میزائل حملہ کرکے ایرانی قدس فورس کے سربراہ میجر جنرل قاسم سلیمانی اور حشد الشعبی کے ڈپٹی کمانڈر ابو مہدی مہندس کو بزدلانہ طور پر شہید کردیا تھا ۔

0 replies

Leave a Reply

Want to join the discussion?
Feel free to contribute!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے