دنیا کے دیگر ممالک کی طرح پاکستان میں بھی آئے روز کورونا وائرس کے کیسز میں اضافہ دیکھا جا رہا ہے جبکہ سندھ میں آج مزید 2 اموات کی تصدیق ہونے کے بعد ملک میں مجموعی ہلاکتیں 26 تک پہنچ گئیں۔

سندھ، پنجاب، گلگت بلتستان، اسلام آباد، خیبر پختونخوا اور بلوچستان میں مزید 231 متاثرین کے کورونا ٹیسٹ مثبت آنے کی تصدیق کی گئی جس کے بعد متاثرین کی مجموعی تعداد 2007 ہوگئی، یہ پاکستان میں مسلسل دوسرے روز سب سے زیادہ سامنے آنے والے کیسز ہیں۔

نئے کیسز کے اضافے کے بعد پنجاب ایک بار پھر سندھ سے آگے نکل گیا ہے۔

سندھ
سندھ ہیلتھ اینڈ پاپولیشن ویلفیئر کی وزیر ڈاکٹر عذرا فضل پیچوہو نے کورونا وائرس سے کراچی میں مزید 2 اموات کی تصدیق کی۔

 

انہوں نے بتایا کہ کراچی میں وائرس سے متاثرہ دو افراد، 70 سالہ اور 74 سالہ فرد دم توڑ گئے۔

ان کا کہنا تھا کہ دونوں کے کورونا وائرس کے ٹیسٹ مثبت آئے اور دونوں آج انتقال کرگئے، مذکورہ اموات کے بعد صوبے میں مجموعی ہلاکتوں کی تعداد 8 ہوچکی ہے۔

اس سے قبل سندھ کی وزیر صحت و بہبود آبادی کی میڈیا کوآرڈینیٹر میران یوسف کے مطابق سندھ میں مزید سامنے آنے والے 61 کیسز میں سے 45 کراچی سے ہیں، اس کے علاوہ 14 کیسز حیدرآباد سے رپورٹ ہوئے اور ان تمام افراد کا تعلق تبلیغی جماعت سے ہے اور 2 کیسز جامشورو سے رپورٹ ہوئے۔

صوبائی حکام کے مطابق یہ تمام کیسز مقامی طور پر وائرس کی منتقلی کے کیسز ہیں۔

بعد ازاں صوبائی وزیر صحت نے 49 نئے کیسز سامنے آنے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ سندھ میں کورونا وائرس کے متاثرین کی تعداد 676 ہوگئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ کراچی میں اس وقت 274 کورونا متاثرین زیر علاج ہیں، حیدر آباد میں متاثر ہونے والوں کی تعداد 128 ہے جس میں 94 کیسز کا تعلق تبلیغی جماعت سے ہے۔

بلوچستان
بلوچستان کے صوبائی سیکریٹری فضل اصغر نے تصدیق کی کہ صوبے میں کورونا وائرس کے 6 نئے کیسز سامنے آئے ہیں جس کے بعد صوبے میں وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد 158 ہوگئی۔

علاوہ ازیں انہوں نے بتایا کہ 17 سے زائد مریض صحتیاب ہوگئے ہیں۔

گلگت بلتستان
دوسری جانب ملک میں کورونا وائرس کیسز سے متعلق تفصیلات فراہم کرنے والی سرکاری ویب سائٹ کے مطابق گلگت بلتسنان میں مزید 20 کیسز کا اضافہ ہوا ہے جس کے بعد علاقے میں متاثرین کی تعداد 148 ہوگئی ہے۔

اسلام آباد
سرکاری ویب سائٹ کے مطابق اسلام آباد میں مزید 7 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں جس کے بعد وہاں متاثرین کی مجموعی تعداد 58 ہوگئی ہے۔

پنجاب
ادھر ترجمان پرائمری اینڈ سکینڈری ہیلتھ کئیر ڈیپارٹمنٹ (کورونا مانیٹرنگ روم) کے مطابق پنجاب میں مزید 7 کیسز کی تصدیق ہوئی ہے جس کے بعد صوبے میں متاثرہ افراد کی تعداد 658 ہوگئی ہے۔

ترجمان کے مطابق صوبے میں کورونا وائرس سے اموات کی تعداد 9 ہے جبکہ 5 مریضوں کو صحت یاب ہو نے کے بعد ڈسچارج کیا جاچکا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: کورونا وائرس: مزید 7 افراد کا انتقال، ملک میں مجموعی اموات 24 ہوگئیں

بعد ازاں ترجمان نے مزید 18 نئے کیسز سامنے آنے کی تصدیق کی جس کے بعد صوبے میں متاثرہ افراد کی تعداد 676 ہوگئی ہے۔

چند گھنٹے بعد انہوں نے مزید 32 کیسز کے اضافے کا بتایا جس کے بعد صوبے میں متاثرہ افراد کی تعداد 708 ہوگئی۔

خیبر پختونخوا
محکمہ صحت خیبر پختونخوا نے بھی مزید 32 نئے کیسز کی تصدیق کی جس کے بعد صوبے میں متاثرین کی تعداد 253 ہوگئی۔

بیان میں کہا گیا کہ ان نئے کیسز میں سے 27 مقامی طور پر منتقل ہونے والوں جبکہ 5 تفتان سے آنے والے زائرین کے ہیں۔

خیال رہے کہ نئے کیسز کی تصدیق کے بعد سندھ میں متاثرین کی تعداد 676، پنجاب میں بھی 708، خیبرپختونخوا میں 2531، بلوچستان میں 158، گلگت بلتسنان میں 148، آزاد کشمیر میں 6 جبکہ اسلام آباد میں متاثرین کی تعداد 58 ہے۔

اس کے علاوہ ملک میں 58 افراد اس وائرس کا شکار ہونے کے بعد صحتیاب ہوچکے ہیں جبکہ 26 اموات بھی رپورٹ ہوئی ہیں۔

صوبوں میں اموات کی بات کی جائے تو اب تک پنجاب میں 9 افراد جان کی بازی ہار چکے ہیں، اس کے علاوہ خیبرپختونخوا میں 6، سندھ میں 8، گلگت بلتستان میں 2 اور بلوچستان میں ایک فرد اس مہلک وائرس سے انتقال کرچکا ہے۔

پاکستان میں اب تک ہونے والی اموات
پاکستان میں کورونا وائرس سے پہلی ہلاکت 18 مارچ کو سامنے آئی جبکہ اسی روز دوسری موت کی بھی تصدیق کردی گئی۔

18 مارچ کو خیبرپختونخوا کے وزیر صحت تیمور جھگڑا نے مردان میں پہلے شخص کے کورونا وائرس کی وجہ سے انتقال کرجانے کے بارے میں آگاہ کیا۔

بعد ازاں کچھ ہی دیر میں انہوں نے ہنگو میں دوسرے فرد کی موت کی تصدیق کی۔

یہ بھی پڑھیں: سندھ ، بلوچستان میں نماز کے اجتماعات پر پابندی

20 مارچ کو ملک کے سب سے بڑے شہر کراچی میں وائرس سے ایک مریض کا انتقال ہوا تو اس طرح تعداد 3 تک جا پہنچی۔

22 مارچ کو خیبرپختونخوا میں ہی ایک اور مریض کے انتقال کی خبر سامنے آئی تو کچھ ہی دیر بعد گلگت بلتستان میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کا علاج کرنے والا ڈاکٹر اسی عالمی وبا کا شکار ہوکر جان کی بازی ہار گیا۔

اگلے ہی دن یعنی 23 مارچ کو بلوچستان حکومت کی جانب سے صوبے میں کورونا وائرس کا پہلا مریض دم توڑ گیا۔

جہاں ایک طرف متاثرہ افراد کی تعداد میں اضافہ سامنے آرہا تھا وہیں 24 مارچ کو پنجاب میں بھی پہلی ہلاکت سامنے آگئی۔

پنجاب میں ہونے والی یہ موت ملک میں مقامی سطح پر منتقل ہونے والے کیس سے پہلا انتقال تھا۔

علاوہ ازیں 25 مارچ کو بھی ملک میں ایک اور موت کی تصدیق ہوئی اور راولپنڈی میں 50 سالہ خاتون دم توڑ گئیں۔

26 مارچ کو لاہور کے نجی ہسپتال میں ایک مریض جان کی بازی ہار گیا جس کے بعد صوبے میں کورونا وائرس سے 3 اور ملک میں مجموعی طور پر 9 اموات ہوگئیں۔

27 مارچ کو لاہور میں ایک اور مریض کورونا وائرس کے باعث دم توڑ گیا جس کے بعد صوبے میں اموات کی تعداد 4 ہوگئی۔

اسی روز فیصل آباد میں بھی 22 سالہ نوجوان کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کی گئی جس کے بعد صوبے میں 5 اور ملک بھر میں اس وبا سے اموات 11 ہوگئیں۔

28 مارچ کو صوبہ خیبرپختونخوا کے وزیراعلیٰ کے مشیر برائے اطلاعات اجمل وزیر نے ایک خاتون کی موت کی تصدیق کی جس کے بعد ملک میں اموات کی تعداد 12 ہوگئی۔

29 مارچ کو ملک میں سب سے زیادہ 5 ہلاکتوں کی تصدیق ہوئی، وزیرصحت سندھ نے صوبے میں کورونا وائرس سے متاثرہ 2 افراد کے انتقال کی تصدیق کی، دوسری طرف خیبر پختونخوا میں محکمہ صحت کے عہدیدار نے تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ 78 سالہ شخص کورونا وائرس کے باعث انتقال کرگیا۔

علاوہ ازیں پنجاب میں بھی ایک اور موت ہوئی جو اس روز کی چوتھی جبکہ مجموعی طور پر پنجاب کی چھٹی ہلاکت تھی، بعد ازاں گلگت بلتستان سے بھی ایک اور فرد کی موت کی تصدیق ہوئی جو اس روز کی پانچویں موت تھی، اس بارے میں بتای گیا کہ ایک میڈیکل اسٹافر کورونا وائرس کی وجہ سے انتقال کرگیا۔

30 مارچ کو ملک میں کورونا وائرس سے مزید 7 افراد انتقال کرگئے تھے۔

0 replies

Leave a Reply

Want to join the discussion?
Feel free to contribute!

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے